خون کے آخری قطرے تک یہ کام کرتا رہوں گا، عمران خان نے سیاسی مخالفین پر بجلیاں گرانے والی اعلان کر دیا

خون کے آخری قطرے تک یہ کام کرتا رہوں گا، عمران خان نے سیاسی مخالفین پر بجلیاں گرانے والی اعلان کر دیا
خون کے آخری قطرے تک یہ کام کرتا رہوں گا، عمران خان نے سیاسی مخالفین پر بجلیاں گرانے والی اعلان کر دیا
لاہور(نیوز ڈیسک)تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے کہا ہے کہ خون کے آخری قطرےتک ملک اور عوام کیلئے لڑتا رہوں گا۔ لاہور مینار پاکستان پر جلسہ عام سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ قوم نے مجھے کبھی مایوس نہیں کیا ہر مرحلے پر میری مدد کی میں بھی انہیں مایوس نہیں کروں گا اور خون کے آخری قطرے تک عوام کے حقوق کے لیے لڑوں گا۔

عمران خان نے کہا کہ جب قوم اپنے نظریے سے ہٹ جائے تو وہ تباہ ہوجاتی ہے، یہ ملک ایک نظریے کی بنیاد پر بنا، قائد اعظم اس نتیجے پر پہنچ گئے تھے کہ کانگریس ہندو راج چاہتی ہے اور ایک دن آئے گا کہ مسلمانوں کے ساتھ مودی بدترین سلوک کرے گا اسی لیے

 

 

انہوں نے فیصلہ کیا کہ مسلمان اور ہندو الگ الگ رہیں گے لیکن ان کی سوچ تھی کہ پاکستان میں ہر مذہب کے لوگوں کو یکساں آزادی حاصل ہوگی لیکن کہاں قائد اعظم کی سوچ اور کہاں یہ آج کے حکمران۔
چیئرمین پی ٹی آئی نے کہا کہ تمام اقلیتیں برابر کی شہری ہیں، یہ ملک مدینہ کی ماڈل ریاست کے طور پر بننا تھا جہاں قانون سب کے لیے برابر ہے کہ فرمان رسولؐ کے مطابق اگر فاطمہ بھی چوری کرتی تو ہاتھ کاٹ دیتا، مدینہ کی ریاست دنیا کی تاریخ کی پہلی فلاحی ریاست بنی جس نے یتیموں، بیواؤں اور غریبوں کی مدد کی، پاکستان کو ایسی ہی ریاست بنانا ہے۔ اس موقع پر پی ٹی آئی کی جانب سے ایک ویڈیو فلم دکھائی گئی جس کے بعد عمران خان نے ن لیگ پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان کے وزیر اعظم کی عزت نہیں رہی اور ایئر پورٹ پر شاہد خاقان عباسی کے کپڑے اتروالیے گئے۔

عمران خان نے کہا کہ پاکستان کی 60 سال کی تاریخ میں اس ملک پر 6 ہزار ارب روپے قرض چڑھا بعدازاں آصف زرداری کے دور حکومت میں یہ قرض دگنا ہوکر 13 ہزار ارب تک پہنچا لیکن 2013ء تا 2018ء کے دوران یہ قرضہ 13 ہزار سے 27 ہزار ارب تک پہنچ گیا یہ قرض مہنگائی، پانی، بجلی اور گیس پر ٹیکس لگا کرعوام سے وصول کیا جائے گا کیوں کہ ملک کو قرضہ واپس کرنا ہے، نائیجریا کے بعد پاکستان وہ واحد اسکول ہے جہاں سب سے زیادہ یعنی ڈھائی کروڑ بچے اسکولوں میں نہیں پڑھتے، یہ تعداد آسٹریلیا کی آبادی سے بھی زیادہ ہے۔

انہوں نے کہا کہ ن لیگ کہتی ہے میں لاڈلہ ہوں حالانکہ میں اپنی ماں کا لاڈلہ ہوں، جب میری والدہ کو کینسر ہوا تو مجھے پتا چلا کہ پورے پاکستان میں کینسر کا کوئی اسپتال نہیں، اگر اس دور میں شوکت خانم اسپتال ہوتا تو میری ماں کا علاج یہاں ہوجاتا تاہم مجھے والدہ کو انگلینڈ لے جانا پڑا بعد میں واپس آیا تو والدہ کے علاج کے دوران ایک غریب مزدور کو اپنے بھائی کا کینسر کا علاج کراتے دیکھ کر فیصلہ کیا کہ غریبوں کے لیے کینسر کا ایسا اسپتال بناؤں گا جہاں غریبوں کا مفت علاج ہوگا جس کے بعد دنیا بھر میں پاکستانیوں سے فنڈ جمع کرکے شوکت خانم اسپتال بنایا۔
ابتدائی خبر ۔۔۔

انٹر نیٹ کی دنیا میں سب سے زیادہ پڑھے جانے والے مضا مین
loading...
اس وقت سب سے زیادہ مقبول خبریں
خصوصی فیچرز

تازہ ترین خبریں

دلچسپ و عجیب

بزنس

صحت